پٹرول کی قیمت کم بڑھانے سے 2 ارب روپے کا نقصان ہوا : وزیر خزانہ

اسلام آباد: وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے کی وجہ عالمی مارکیٹ میں اضافہ ہے۔پٹرول کی قیمت کم بڑھانے سے حکومت کو 2 ارب روپے کا نقصان ہوا ہے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان عوام پر بوجھ میں کمی لانا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا ہے کہ کورونا کی وجہ سے پوری دنیا میں قیمتوں پر اثر پڑا ہے، خطے میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں پاکستان 17ویں نمبر پر ہے، ہم چاہتے ہیں پٹرول کی قیمتوں کو کم کیا جائے، پٹرول کی قیمت کم کرتے ہیں تو اپنی جیب سے دینے پڑیں گے، پٹرول کی قیمت کم بڑھانے سے حکومت کو 2 ارب روپے کا نقصان ہوا ہے۔

شوکت ترین نے کہا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے کی وجہ عالمی مارکیٹ میں اضافہ ہے، بھارت 235 روپے فی لیٹر پٹرول دے رہا ہے۔وزیر خزانہ کا کہنا ہے کہ کامیاب پاکستان پروگرام لانچ کررہے ہیں، ملکی معیشت بہتری کی جانب گامزن ہے، زرعی شعبے کی ترقی، پیداواری لاگت بڑھانے کے لیےاقدامات کررہے ہیں۔

شوکت ترین نے کہا ہے کہ احساس پروگرام کے ذریعے لوگوں کی مدد کررہے ہیں، وزیراعظم ملک کو ریاست مدینہ بنانا چاہتے ہیں، ملک کو ریاست مدینہ ہم بنا کررہیں گے۔انہوں نے مزید کہا ہے کہ زراعت کے شعبے میں غفلت کا نتیجہ بھگت رہے ہیں، لوگ کہتے ہیں بہت زیادہ مہنگائی ہوگئی ہے، گندم، دالیں اور چینی درآمد کررہے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں